Khatam-un-Nabiyyeen MUHAMMAD ﷺ ki 8-Khusoosiyat ??? (By Engineer Muhammad Ali Mirza)

Khatam-un-Nabiyyeen MUHAMMAD ﷺ ki 8-Khusoosiyat ??? (By Engineer Muhammad Ali Mirza)

Today topic is :Khatam-un-Nabiyyeen MUHAMMAD ﷺ ki 8-Khusoosiyat ??? (By Engineer Muhammad Ali Mirza).

Video Information
Title Khatam-un-Nabiyyeen MUHAMMAD ﷺ ki 8-Khusoosiyat ??? (By Engineer Muhammad Ali Mirza)
Video Id 1e8Etlt-Ycg
Video Source https://www.youtube.com/watch?v=1e8Etlt-Ycg
Video Image 1678488164 313 hqdefault
Video Views 14210
Video Published 2017-12-25 09:42:21
Video Rating 5.00
Video Duration 00:11:18
Video Author Engineer Muhammad Ali Mirza – Official Channel
Video Likes 489
Video Dislikes
Video Tags #KhatamunNabiyyeen #MUHAMMAD #ﷺ #8Khusoosiyat #Engineer #Muhammad #Ali #Mirza
Download Click here

Engineer Muhammad Mirza Ali


Mirza Ali

Muhammad Ali Mirza was born on 4 October 1977 in Jhelum, a city in Punjab, Pakistan. He is a 19th grade mechanical engineer in a government department.

Muhammad Ali Mirza, commonly known as Engineer Muhammad Ali Mirza is a Pakistani Islamic scholar and commentator.

Is engineer Muhammad Ali Mirza Sunni or Shia?

engineer mirza ali

Engineer Muahmmad Ali Mirza is Sunni, Known "Mulim ilmi kitabi".

How do I contact engineer Muhammad Ali?

Engineer Muhammad Ali Mirza

You can call on this phone number, which is "03215900162", and discuss your problem with them.

Who is Mirza Ali of Pakistan?

muhammad mirza ali

Muhammad Ali Mirza, commonly known as Engineer Muhammad Ali Mirza is a Pakistani Islamic scholar and commentator.

What is the age of engineer Muhammad Ali Mirza?

mirza ali

(Engineer Muhammad Ali Mirza) Born: October 4, 1977 (age 46 years) Place: Jhelum Country: Pakistan

What is religion of Engineer Muhammad Ali Mirza?

Engineer Muhammad Ali Mirza is Muslim by religion. He is also known as muslim ilmi kitabi. He says " I,m Muslim Ilmi Kitabi".

What is the Education of Engineer Muhammad Ali Mirza?

He is an engineer by profession. And also a "Pakistani Islamic Scholar". He studied in "University of Engineering and Technology, Taxila".

41 Comments

  1. Hazrat Shah Waliullah Muhaddith of Delhi who is known to be the mujadid of the 12th century states:

    أما الشاه ولي الله الدهلوي فيقول:
    “وخُتم به النبييون.. أي لا يوجد من يأمره الله سبحانه بالتشريع على الناس.”
    (التفهيمات الإلهية، ج2 ص85 بتصحيح وتحشية الأستاذ غلام مصطفى القاسمي، أكادمية الشاه ولي الله الدهلوي حيدر آباد باكستان)

    “The closing of prophethood with the Holy Prophet saw means that there can be no divinely inspired reformer after him who would be commissioned with a new law by Allah”(Tafheemat-e-Ilahiyya Part 2 Pagee 85)

    He further states:

    “The meaning of the Holy Prophet being the Khataman Nabiyyin is that there shall not now appear a person whom God may appoint with a new Law for mankind, that is to say, there shall be no prophet who shall come with a new Law(Tafhimate Ilahiyya Volume II, page 53, 72-73)

    The people generally believe that when he (Messiah) would descend on earth, he would only be an ‘Ummati.’ Certainly, it is not correct. He would be an embodiment of the spirit which enkindled the soul of the Holy Prophet (saw) would be his faithful replica”… “There cannot be an independent prophet after the Holy Prophet (saw) who is not his follower and his adherent” … “The end of prophethood with the Holy Prophet (saw) only means that there can be no law bearing prophet or a prophet from outside the Ummah(Al Khairul Kathir, page 111)

    Hazrat Mohyuddin Ibn Arabi states: ““The prophethood has terminated with the person of the Prophet of Allah(saw), and his blessings, was no other than the law-bearing prophethood not prophethood itself and this is the meaning of his “verily apostleship and prophethood ceased with me therefore there shall be after me neither an apostle nor a prophet i.e there shall not be after me a prophet with a law other than mine but that he shall be subject to my law”(Al Fatuhat ul Makiyya Volume 2 page 3)

    He also states:

    “From the study and contemplation of the Darud we have arrived at the definite conclusion that there shall, from among the Muslims, certainly be persons whose status, in the matter of prophethood, shall advance to the level of prophets, if Allah pleases. But they shall not be given any book of law”…“It is the height of excellence in the Holy Prophet (saw) that through the prayer in ‘Darud Sharif’ he placed his progeny at par with the prophets, and his surpassing eminence over Hazrat Ibrahim lies in the fact that his Sharia can never be repealed (Fatuhati Makiyyah Volume 1, Chapter 73, Page 545)

    In fine, we have learnt for certain (from Darud Sharif) that this ‘Ummah’ is destined to have amongst it such personages as would be ranked with the prophets in the eyes of Allah, but they shall not be law-bearers(Fatuhati Makiyyah Volume 1, Chapter 73, Page 545)

    “Jesus (as) shall descend amongst the Muslim Ummah as an arbitrator without a new law. Most surely, he will be a prophet. There is no doubt about it.”(Fatuhati Makiyyah Volume 1, Chapter 73, Page 570)

    “It is known that ‘Ahle Ibrahim’ are the prophets and messengers, and they are the people who came after Abraham like Isaac, Jacob, Joseph and those prophets and messengers from their progeny manifest Laws. This signifies the fact that in the sight of God they had prophethood. The Holy Prophet (saw) intended that followers who are from among those who followed him should achieve the rank of prophethood, though they would not be law-bearing. But he kept for them a type of Sharia from his own Sharia. Therefore he said, ‘O Allah exalt Muhammad and his Ahl by bestowing mercy upon them as Thou conferred prophethood upon the Ahl of Ibrahim thus exalting Ibrahim. Consequently, they had prophethood with Shariah. And Thou has decreed that there would be no Shariah after me. Hence, shower Mercy upon me and upon my Ahl – i.e. confer upon them the rank of prophethood from Thyself, notwithstanding that they would not bring any Sharia. The height of Muhammad’s exaltedness is expressed by the fact that through invoking prayers for him he raised his own progeny to the level of prophets and he was granted the superiority over Hazrat Ibrahim through the fact that the Law he brought should never be abrogated.”(Fatuhati Makiyyah Volume 1, Chapter 73, Page 177-178)

    He also states:

    “In so far as the law-bearing prophethood is concerned, it verily ceased and terminated in Muhammad, peace and blessings of Allah be upon him, and therefore has there is no law-giving prophet aBer him…. but Allah has in His graciousness to His servants, continued general prophethood without the law-bearing elements.” (Fusus ul Hikam, Page 134-135)

  2. Hazrat Imam Abdul Wahab Sha’rani States:

    يشرح الشيخ عبد الوهاب الشعراني (المتوفى 976 هـ) حديث “لا نبي بعدي” ويقول:

    “فقوله صلى الله عليه وسلم “لا نبي بعدي ولا رسول بعدي”، أي ما ثمّ مَن يشرع بعدي شريعة خاصة.”

    (اليواقيت والجواهر للشعراني ج 2 ص 35 دار المعرفة للطباعة والنشر بيروت 1900م)

    “”Let it be known that the order of prophethood has not totaly ceased; it is the law – bearing prophethood which has discontinued.” Then while explaining the Hadith la nabiyya badi and La rasoola badi expounded that there shall be no law-bearing prophet after him.” (Al Yawaqit wal Jewahir, Volume 2, Page 39)

    He also states in the same book:

    “Surely, prophets and messengers have gone before and shall continue to appear in this world in future, but essentially they will be under the Sharia of the Holy Prophet Muhammad saw. But most men are ignorant of this truth”(Page 27)

    The Messiah of the Latter Days shall make his advent as a Wali with the qualities of a prophet, and the Sharia of the Holy Prophet Muhammad (saw) shall be unfolded unto him through revelation from Allah and he shall have a complete grasp of its meaning”(Page 27)

    “Remember that prophethood has not disappeared. Prophets can appear. The prophethood that has ceased to exist is only that which brings with it a new law”(Page 35)

    Allama Abul Fadhl Shihabuddin Assayyad Mahmud states:

    “The tradition, that there is no revelation after me is absurd. The notion that Gabrael will not descend to the earth after the demise of the Holy Prophet, peace and blesssings of Allah be upon him, has no foundation at all ….. Most probably what is meant by the negation of revelation regarding Isa, peace be on him, after his descent is the revelation of the Law, but what has been described, is the revelation without the Law.” (Rooh ulmaani Volume 21, Page 41)

    Hazrat Maulana Rumi states:

    “The Holy Prophet saw was the Khatam because no one had ever been like him before, nor shall there be one after him. When an artist excels others in art, you do not say ‘The art has ended with you”(Miftah Ul Ulum Volume 15 Pages 56-57)

    He also states: “Make such plans to perform righteousness in the way of God that you attain prophethood within the Ummah” (Masnawi, Daftar I, Page 53, Vol V page 42)

    And: “The Holy Prophet (saw) was declared ‘Khatam’ because he excelled in munificence and in perpetuating the spiritual blessings to his followers. When a master excels all others in his art, don’t you use the word ‘Khatam’ to convey the idea that he has excelled all others in his domain?”(Page 18-19 1917 edition)

    Lastly: “Stive hard in the path of virtue in a manner so that you may be blessed with prophethood while you are still a follower” (Miftah Ulum Volume 13, Page 98, 152)

    Nawab Siddique Hasan Khan, a leader of the Ahl-e-Hadith stated:

    ويقول السيد نواب نور الحسن خان بن نواب صديق حسن خان

    “الحديث “لا وحي بعد موتي” لا أصل له، غير أنه ورد “لا نبي بعدي”، ومعناه عند أهل العلم أنه لن يأتي بعدي نبي بشريعة تنسخ شريعتي.”

    “The Hadith there is no revelation after my demise’ has no foundation, although LA NABIYYA BA’DEE is quite correct, which, according to the men of letters, means that there shall be no prophet after me who shall be raised with a new code of Law which abrogates my Law.” (Iqtrab ul Saat Page 162)

    Hazrat Maulana Abul Hasanat Abdul Hayee states:

    “”After the demise of the Holy Prophet, peace and blessings of Allah be upon him, or even during his own lifetime, it is not an impossibility for someone to be exalted to the position of a simple prophet. But a prophet with a new Law is, indeed, forbidden.” (Dafe al Wasawis Fi Athar ibn Abbas Page 16)

    Maulana Muhammad Qasim Nanotwi who is the founder of Dar-ul-Uloom Deoband stated:

    “According to the layman the Messenger of Allah, peace and blessings on him, being the KHATAM (seal), is supposed to have appeared after all the previous prophets. But men of understanding and the wise know it very well that being the first or the last, chronologically, does not carry any weight. How could, therefore, the words of the Holy Qura’n: ”But he is the Messenger of Allah and the seal of the Prophets” (33:41) glorify him? But I know very well that none from among the Muslims would be prepared to agree with the common men.” (Tahzir ul Naas Page 4-5)

    He also states: “If we accept this view it shall not at all contravene his finality, even though someone in the future does rise to the high status of prophethood” (Tahzir ul Naas Page 34)

    Hazrat Sheikh Ahmad Farooqi states:

    The rising of prophets after the Khatamar Rasul Hazrat Muhammad, the Chosen One saw from among his own followers and as a heritage, does not in any way run counter to his status asthe Khatamar Rasul. Therefore, O reader, do not be among those who doubt” (Maktubat Imam Rabani Vol 1)

    Hazrat Maulana Abul Hasanat Abdul Hayee Brehlvi states:

    After the demise of the Holy Prophet saw or even during his own lifetime, it is not an impossibility for someone to be exalted to the position of a simple prophet. But a prophet with a new Law is, indeed, forbidden” (Dafail Waswas, Page 16).

    The sum up of all the above is that wherever Muhammad pbuh said I am Last Prophet he means Sharri Nabuwwat and wherever he said future Prophet can come it means Ummati(Muhammadi) Nabuwwat.

  3. حدیث ’’لَا نَبِیَّ بَعْدِیْ‘‘ کے معانی از بزرگان ِ سلف

    اعتراض : یہ ثابت کرنے کے لئے کہ آنحضور ﷺ کے بعد کسی قسم کا کوئی نبی نہیں آئے گا حدیث ’’لَا نَبِیَّ بَعْدِیْ‘‘ پیش کرتے ہیں۔ اور مطلب یہ کرتے ہیں کہ آنحضور ﷺ کے بعد کسی قسم کا کوئی نبی نہیں آئے گا۔

    ان کے اس دعویٰ کی غلطی ثابت کرنے کے لئے ہم ذیل میں ان چند بزرگان کے حوالے درج کرتے ہیں جنہوں نے اس حدیث کی تشریح فرمائی ہے کہ میرے بعد شریعت لانے والا کوئی نبی نہیں ہو گا:۔

    زوجہ رسول ﷺ حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا

    لوگو ! آنحضرت ﷺ کو خاتم النبیین تو کہو مگر ہر گز یہ نہ کہو کہ آپ ﷺ کے بعد کوئی نبی نہیں آئے گا ۔

    (تفسیر الدرالمنثور جلد 5 صفحہ 204)

    عالم بے بدل حضرت ابن قتیبہ

    حضرت عائشہ رضی اللہ عنہا کا یہ قول آنحضرت ﷺ کے فرمان ’لانبی بعدی‘ کے مخالف نہیں کیونکہ حضور ﷺ کا مقصد اس فرمان سے یہ ہے کہ میرے بعد کوئی ایسا نبی نہیں جو میری شریعت کو منسوخ کرنے والا ہو ۔

    (تاویل مختلف الاحادیث صفحہ 236)

    محدث امت امام محمد طاہر گجراتی

    حضرت عائشہ رضی اللّٰہ عنہا کا یہ قول ’لانبی بعدی‘ کے منافی نہیں کیونکہ آنحضرت ﷺ کی مراد یہ ہے کہ ایسا نبی نہیں ہوگا جو آپ ﷺ کی شریعت کو منسوخ کرے ۔

     (تکملہ مجمع البحار صفحہ85)

    حضرت امام عبدالوہاب شعرانی

    مطلق نبوت نہیں اٹھائی گئی ۔ محض تشریعی نبوت ختم ہوئی ہے ۔۔۔ اور آنحضرت ﷺ کے قول مبارک ’لا نبی بعدی و لا رسول‘ سے مراد صرف یہ ہے کہ میرے بعد کوئی ایسا نبی نہیں جو نئی شریعت لے کر آئے ۔

    (الیواقیت والجواہر جلد 2صفحہ 24)

    حضرت شاہ ولی اللہ محدث دہلوی

    آنحضرت ﷺ کے اس قول ’لا نبی بعدی‘ سے ہمیں یہ معلوم ہوا ہے کہ جو نبوت اور رسالت ختم ہوگئی ہے وہ حضور ﷺ کے نزدیک نئی شریعت والی نبوت ہے ۔

    (قرۃ العینین صفحہ 319)

    حضرت حافظ برخوردار صاحب

    اس حدیث کے معنی یہ ہیں کہ میرے بعد کوئی ایسانبی نہیں جو نئی شریعت لے کر آئے ، ہاں اللہ چاہے انبیاء ، اولیا میں سے ۔

    (نبراس صفحہ 445 حاشیہ)

    حضرت محی الدین ابن عربی

    قول رسول کہ رسالت اور نبوت منقطع ہوگئی ہے ۔ میرے بعد نہ کوئی رسول ہے نہ کوئی نبی ، سے مراد یہ ہے کہ اب ایسا نبی نہیں ہوگا جو میری شریعت کے مخالف شریعت پر ہو ۔ بلکہ جب کبھی کوئی نبی ہوگا تو وہ میری شریعت کے حکم کے ماتحت ہوگا۔

    (فتوحات مکیہ جلد2 صفحہ3)

    نواب نورالحسن خان

    حدیث ’لاوحی بعدی‘ بے اصل ہے۔البتہ ’لانبی بعدی‘ آیا ہے ۔ جس کے معنی نزدیک اہل علم کہ یہ ہیں کہ میرے بعد کوئی نبی شرع ناسخ نہ لاوے گا ۔

    (اقتراب الساعہ صفحہ 162)

    مولوی محمد زمان خان آف دکن

    حدیث ’لاوحی بعدی‘ باطل و بے اصل ہے ۔ ہاں ’لانبی بعدی‘ صحیح ہے ۔ لیکن معنی اس کے علماء کے نزدیک یہ ہیں کہ کوئی نبی صاحب شرع کہ شرع محمدی کو منسوخ کرے بعد حضرت ﷺ کے حادث نہ ہو ۔

    (ہدیہ مہدویہ صفحہ 301)

    امام اہل سنت حضرت ملا علی قاری

    خاتم النبیین کے معنی یہ ہیں کہ آنحضرت ﷺ کے بعد کوئی ایسا نبی نہیں آسکتا جو آپ ﷺ کے دین کو منسوخ کرے اور آپ کا امتی نہ ہو۔

    (الموضاعات الکبریٰ صفحہ 292)

    شیخ عبدالقادر کردستانی

    آنحضرت ﷺ کے خاتم النبیین ہونے کے یہ معنی ہیں کہ آپ کے بعد کوئی نبی نئی شریعت لے کر مبعوث نہ ہوگا۔

    (تقریب المرام جلد 2صفحہ233)

    فرقہ مہدویہ کے بزرگ سید شاہ محمد

    ہمارے محمد ﷺ خاتم نبوت تشریعی ہیں فقط ۔

    (ختم المہدیٰ سبل السویٰ صفحہ 24)

    خلیفہ الصوفیاء شیخ العصر حضر ت ا لشیخ بالی آفندی

    خاتم الرسل وہ ہے جس کے بعد کوئی نبی صاحب شریعت جدیدہ پیدا نہ ہوگا ۔

    (شرح فصوص الحکم صفحہ 56) (مقامات مظہری صفحہ 88)

    مولانا ابوالحسنات عبدالحئی فرنگی محل

    ’بعد آنحضرت ﷺ کے یا زمانے میں آنحضرت کے مجرد کسی نبی کا ہونا محال نہیں بلکہ صاحب شرع جدید ہوناالبتہ ممتنع ہے ۔ ‘

    (دافع الوسواس صفحہ 16)

    ان مندرجہ بالا ارشادات سے روز روشن کی طرح ثابت ہے کہ آنحضرت ﷺ کے غیر مشروط آخری نبی ہونے کا جو تصور چودھویں صدی میں پیدا ہو ا اس کا گزشتہ تیرہ صدیوں کی اسلامی تاریخ میں کوئی نشان نہیں ملتا ۔ بلکہ علمائے سلف محض زمانی لحاظ سے آخری نبی ہونے کے خیال کو ردّ کرتے رہے ہیں ۔

    نامور صوفی حکیم ترمذی

    ’خاتم النبیین کی یہ تاویل کہ آپ ﷺ مبعوث ہونے کے اعتبار سے آخری نبی ہیں بھلا اس میں آپ کی کیافضیلت و شان ہے اور اس میں کون سی علمی بات ہے ۔ یہ تو محض احمقوں اور جاہلوں کی تاویل ہے ۔‘

     (کتاب ختم الاولیاء صفحہ 341)

    بانی دیوبند مولوی محمد قاسم نانوتوی

    ’عوام کے خیال میں تو رسول اللہ کا خاتم ہونا بایں معنی ہے کہ آپ ﷺ کا زمانہ انبیاء سابق کے زمانے کے بعد اور آپ سب میں آخر نبی ہیں مگر اہل فہم پر روشن ہوگا کہ تقدم یا تاخر زمانے میں بالذات کچھ فضیلت نہیں ۔۔۔ میں جانتا ہوں کہ اہل اسلام سے کسی کو یہ بات گوارا نہ ہوگی ۔۔۔ اگر بالفرض بعد زمانہ نبوی صلعم بھی کوئی نبی پیدا ہو تو پھر بھی خاتمیت محمدیہ میں کچھ فرق نہ آئے گا ۔ ‘

    (تحذیر الناس صفحہ 3، 28)

  4. حضرت مسیح و مھدی موعود علیہ السلام نے فرمایا ہوا ھے :
    کچھ شعر و شاعری سے اپنا نہیں تعلق
    اس ڈھب سے کوئی سمجھے بس مدعا یہی ھے
    اللہ تعالیٰ نے اپنے الہام سے اس پر اپنی مہر تصدیق یوں ثبت فرمائی ھوئی ھے :
    در کلامِ تو چیزیست کہ شاعراں را دخلے نیست

    اگر گراں نہ ھو تو حضرت علیہ السلام کی طویل نظم کے کچھ مزید چنیدہ شعر آپ کے سامنے رکھنا چاھتا ھوں تاکہ حضرت کا قلبی احوال آپ پر مزید واضح ھو جائے۔
    ابتدا سے گوشہء خلوت رھا مجھ کو پسند
    شہرتوں سے مجھ کو نفرت تھی ھر اک عظمت سے عار
    پر مجھے تو نے ھی اپنے ھاتھ سے ظاھر کیا
    میں نے کب مانگا تھا یہ تیرا ھی ھے سب برگ و بار
    اس میں میرا جرم کیا جب مجھ کو یہ فرماں ملا
    کون ھوں تا رد کروں حکم ِ شہِ ذی الاقتدار
    اب تو جو فرماں ملا اس کا ادا کرنا ھے کام
    گرچہ میں ھوں بس ضعیف و ناتوان و دلفگار
    فضل کے ھاتھوں سے اب اس وقت کر میری مدد
    کشتیء اسلام تا ھو جائے اس طوفاں سے پار
    دیکھ سکتا ھی نہیں میں ضعفِ دینِ مصطفےٰ
    مجھ کو کر اے میرے سلطاں کامیاب و کامگار
    یا الٰہی فضل کر اسلام پر اور خود بچا
    اس شکستہ نائو کے بندوں کی اب سن لے پکار
    قوم میں فسق و فجور و معصیت کا زور ھے
    چھا رھا ھے ابرِ یاس اور رات ھے تاریک و تار
    ایک عالٙم مر گیا ھے تیرے پانی کے بغیر
    پھیر دے اب میرے مولیٰ اس طرف دریا کی دھار
    بد گمانی نے تمہیں مجنون و اندھا کردیا
    ورنہ تھے میری صداقت پر براھیں بیشمار
    جہل کی تاریکیاں اور سوءِ ظن کی تُند باد
    جب اکٹھے ھوں تو پھر ایماں اُڑے جیسے غُبار
    سخت جاں ھیں ھم کسی کے بُغض کی پرواہ نہیں
    دل قوی رکھتے ھیں ھم دردوں کی ھے ھم کو سھار
    ھے سرِ راہ پر مِرے وہ خود کھڑا مولیٰ کریم
    پس نہ بیٹھو میری رہ میں اے شریرانِ دیار
    سنت اللہ ھے کہ وہ خود فرق کو دکھلائے ھے
    تا عیاں ھو کون پاک اور کون ھے مُردار خوار
    غیر کیا جانے کہ دلبر سے ھمیں کیا جوڑ ھے
    وہ ھمارا ھوگیا اس کے ھوئے ھم جاں نثار
    دشمنو ھم اُس کی رہ میں مر رھے ھیں ھر گھڑی
    کیا کرو گے تم ھماری نیستی کا انتظار
    سر سے میرے پائوں تک وہ یار مجھ میں ھے نہاں
    اے مِرے بدخواہ کرنا ھوش کر کے مجھ پہ وار
    یہ اگر انساں کا ھوتا کاروبار آے ناقصاں
    ایسے کاذب کے لئے کافی تھا وہ پرورگار
    کچھ نہ تھی حاجت تمہاری نے تمہارے مکر کی
    خود مجھے نابود کرتا وہ جہاں کا شہر یار
    پاک و برتر ھے وہ جھوٹوں کا نہیں ھوتا نصیر
    ورنہ اٹھ جائے اماں پھر سچے ھوویں شرمسار
    اسقدر نصرت کہاں ھوتی ھے اک کذاب کی
    کیا تمہیں کچھ ڈر نہیں ھے کرتے ھو بڑھ بڑھ کے وار
    ھے کوئی کاذب جہاں میں لائو لوگو کچھ نظیر
    میرے جیسی جس کی تائیدیں ھوئی ھوں بار بار

  5. ڈاکٹر اسرار کا استدلال بہت بودا ھے اور اس سے ملتا جلتا ھے جیسا سوال فرشتوں نے اٹھایا تھا کہ اے اللہ
    اتجعل فیھا من یفسد فیھا و یسفک الدمآء ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
    اے اللہ کیا تو زمین میں اپنا ایسا جانشین بنانا چاھتا ھے جو وھاں فساد برپا کرے گا اور خونریزی کرے گا ؟
    اس پر اللہ تعالیٰ نے انہیں یہ جواب دیا تھا :
    انی اعلم ما لا تعلمون
    یعنی تمہارا منطقی استدلال درست بھی ھو تو یہ کیوں بھول گئے ھو کہ جو حکمتیں اور جو بھید میں جانتا ھوں وہ تم نہیں جانتے۔
    اس لئے ڈاکٹر اسرار اپنی خطابت کے ترنگ میں اسی طرح کی بات کرگئے کہ
    جب دین کامل ھوگیا اور نعمت اپنے اتمام کو پہنچ گئی تو پھر حضورﷺ کے بعد کسی اور کے آنے کی ضرورت ھی کیا ھے ؟
    لہٰذا ڈاکٹر اسرار اور انہیں سننے والوں کے لئے وھی جواب ھے جو اللہ تعالیٰ نے دیا تھا کہ کسی آنے والے کی ضرورت کا تعین ڈاکٹر اسرار نے نہیں بلکہ بھیجنے والے نے کرنا تھا جو خدا تعالیٰ نے کیا اور اپنے رسول ﷺ کے ذریعے یہ پیش خبری دی کہ دین مکمل ھونے اور نعمت کے متمم ھونے کے باوجود حضورﷺ کے بعد عیسیٰ نبی اللہ بھی آئیں گے اور مھدی خلیفة اللہ بھی آئیں گے اور ان کے سپرد جو کام ھیں وہ آکر ان کاموں کو سر انجام دیں گے۔
    اور کام بھی پہلے سے بتا دئے کہ وہ آکر صلیبی غلبہ کوختم کریں گے اور خنزیر صفت علمائے سوء کی گمراھیوں سے لوگوں کو نجات دلائیں گے۔ نیز
    یحی الدین و یقیم الشریعة
    کے ذریعے دنیائے اسلام میں احیائے اسلام کا فریضہ سرانجام دیں گے اور باقی ساری دنیا میں
    لیظھرہ علی الدین کلہ
    کا عظیم الشان کارنامہ بھی سرانجام دیں گے۔

  6. اس آیت کا ترجمہ تو درست کرو بھائی۔ ڈنڈی تو نہ مارو۔
    خدا کا خوف کرو
    قرآن اللہ کا کلام ھے اس بات کا تو خیال رکھو
    اب سنو آیت خاتم النبیین کا صحیح اور درست ترجمہ اور صحیح مطلب کیا ھے :
    محمد (صلی اللہ علیہ وسلم) تم مردوں میں سے کسی کے باپ نہیں ھیں لیکن اللہ کے رسول ھیں اور خاتم النبیین ھیں۔

    خاتٙم ت کی زبر کے ساتھ ھے۔ مرتبہ اور شان میں سب سے بلند شخص کے لئے عربی میں لفظ خاتم استعمال کیا جاتا ھے۔
    مثلاً حضورﷺ نے حضرت علی رض کو خاتم الاولیاء فرمایا
    اور
    مسجد نبوی کو آخرا المساجد قرار دیا۔
    اس کا مطلب ھے کہ حضرت علی رض اولیاء میں درجہ اور مرتبہ کے لحاظ سے بلند ترین مقام پر فائز ھیں۔ یہ مطلب نہیں کہ نعوذباللہ ولایت ھی ختم ھوگئی۔
    اور اسی طرح مسجد نبوی ساری مساجد میں درجہ اور مرتبہ میں سب سے بلند شان رکھتی ھے۔ یہ مطلب نہیں کہ یہ آخری مسجد ھے جس کے بعد کوئی مسجد نہیں بنے گی۔

    "ت" پر زبر کے ساتھ خاتم کا مطلب آخری یا ختم کرنے والا نہیں ھوتا
    بلکہ "ت" کے نیچے زیر ھو تو تب خاتِم کا مطلب ختم کرنے والا ھوتا ھے۔
    ت پر زبر کے ساتھ خاتم انگوٹھی اور مہر کو بھی کہتے ھیں۔ مہر بطور تصدیق کے ھوتی ھے اور جس کے نام یا عہدہ کی مہر ھو وہ بطور مصدق اپنی مہر لگاتا ھے۔
    لہٰذا آپ سے گزارش ھے کہ اپنے خود تراشیدہ مطالب قرآن کی طرف منسوب نہ کرو کیونکہ قرآن مجید میں خاتم" ت" کی زبر کے ساتھ آیا ھے اس لئے قرآن والے خاتم النبیین کا صحیح مطلب یہ ھے کہ حضور ﷺ سب نبیوں میں مرتبہ اور شان کے لحاظ سے سب سے بلند مقام پر ھیں اور نبیوں کی مہر ھیں۔

    اسی طرح حضرت عیسیٰ اور مھدی علیہ السلام کے بارہ میں بھی اپنی ذاتی خواھشات کو احادیث کی طرف منسوب نہ کرو جو بات حضورﷺ نے احادیث میں فرمائی گئی ھے اس میں تبدیلی کرنے کی گستاخی مت کرو۔ صرف وھی بتائو جو حضورﷺ نے بیان فرمائی ھوئی ھے۔

  7. کاش مولویوں کو اسلام کی سچی فکر ھوتی تو آج عوام الناس اھلِ طائف کی طرح فسادی اور پتھر برسانے والے اور آگیں لگانے والے نہ ھوتے۔ان کے اندر رسولﷺ کی سیرت کے خوبصورت رنگوں کی بہار پیدا ھو چکی ھوتی۔ یہ خوبصورت بہار مولوی کے اپنے اندر پیدا نہیں ھوئی تو وہ دوسروں کے اندر یہ خوبصورت بہار کیسے پیدا کرسکتا ھے ؟

  8. قریباً ھر نبی کے خلاف اجماعِ امت ہوا ھے۔ قرآن مجید میں مذکور نبیوں کے حالات و واقعات پڑھ کر دیکھ لو تورات زبور اور انجیل پڑھ کر دیکھ لو۔ ھر نبی کی امت اور ان کے مذھبی علماء اور لیڈر ھر نبی کی مخالفت کرتے دکھائی دیں گے اور ھر نبی کے خلاف یہی شور سنائی دے گا کہ اپنے آبآء و اجداد کے دین کی طرف واپس آجائو اور اگر باز نہ آئے تو تم واجب القتل ھوگے۔
    آج ھمت کریں اور قرآن مجید کھولیں اور مطالعہ کرکے دیکھیں تو سہی اور اس میں مذکور نبیوں کے حالات پڑھ کر تو دیکھیں تو سہی !
    اس تناظر میں حضرت مرزا غلام احمد قادیانی مھدی و مسیح موعود علیہ السلام کے خلاف ھونیوالا اجماع حضرت مرزا صاحب کی صداقت پر مہر تصدیق ثبت کرتا دکھائی دیتا ھے۔

  9. حضرت مرزا صاحب علیہ السلام کی کتابیں اسطرح نہ پڑھیں جس طرح قرآن مجید اور اسلامک ھسٹری عیسائی مستشرقین نے پڑھی تھی۔ مستشرقین حضرت عائشہ کی شادی کی عمر اور حضورﷺ کی نو شادیوں میں ھی اٹک کر رہ گئے تھے۔
    آپ میری مانیں تو حضرت مرزا صاحب کی کتاب اسلامی اصول کی فلاسفی پڑھ کر دیکھیں تو آپ کو پتہ لگے کہ :
    ھو صادق ھو صادق ھو صادق

  10. یہ آپ کے مفروضات ھیں جو آپ نے یکطرفہ طور پر بنا لئے ھیں۔ ان کی علمی اور انٹیلیکچوئل ویلیو صفر ھے۔آپ میں سے اکثر کا مسئلہ یہ ھے ک آپ لوگ اپنی ذاتی سوچ اور متعصب فکر کو قرآن و سنت اور حدیث پر فوقیت دینے کی گستاخی کے مرتکب ھوتے ھیں۔ یاد رکھیں فیصلہ قرآن و سنت اور حدیث کا چلے گا نہ کہ آپ لوگوں کا ذاتی۔
    اللہ تعالیٰ کا کلام یعنی قرآن مجید اور حضرت خاتم النبین کی سنت و حدیث احمدیہ موقف کو سچا ثابت کرتی ھے۔ ان کے بعد کسی ذاتی خیالات کی کوئی حیثیت اور کوئی وقعت باقی نہیں رھتی۔
    آپ اگر بنی اسرائیل کی مماثلت اختیار کرتے ھوئے مسیحِ موعود اور مھدی معھود کا انکار کر نے پر مصر ھیں تو آپ کی مرضی۔لیکن آپ کو اپنے فیصلے کے بد نتائج کا سامنا بھی خود ھی کرنا پڑے گا۔

  11. احمدی تو سب سے اچھے درجے کے مسلمان کو کہتے ھیں۔ احمدی تو کلام کرنے والے زندہ خدا پر یقین رکھنے والے ھیں۔
    احمدی تو بمطابقِ قرآن یہ یقین بھی رکھتے ھیں کہ جو بھی اللہ اور اللہ کے رسول صلی اللہ علیہ وسلم کی اطاعت کرے گا وہ چار انعامات کا وارث بن سکتا ھے جن میں نبی , صدیق ، شہید اور صالح بن جانے کے انعام شامل ھیں۔
    اس کے علاوہ احمدی قرآن کریم کی رو سے یہ بھی یقین رکھتے ھیں کہ جو ربنا اللہ کہتے اور پھر اس پر پوری طرح قائم ھوجاتے ھیں ان پر ملائکہ نازل ھوتے ھیں جو انہیں بشارت دیتے ھیں کہ ھم اس دنیا میں بھی تمہارے دوست ھیں اور آخرت میں بھی۔
    انجینیئر علی مرزا تو محض ایک خشک منطق والا مسلمان ھے جو احمدی مسلمانوں کے یحی الدین و یقیم الشریعة والے اسلام سے کوسوں دور ھے۔لہٰذا انجینیئر صاحب کے نظریات کو احمدیوں کے سچے کھرے اور حقیقی اسلام سے مت جوڑیں۔ انجینیئر صاحب اتنے خوش نصیب کہاں ؟
    اس لئے انجینیئر صاحب آپ ہی کو مبارک ھوں انہیں اپنے پاس ھی رکھیے۔

  12. گٹر کی بدبو سے اٹھنے والی بھاپ سے پیدا ہونے والی غلیظ ترین مخلوق۔
    مرزا غلام قادیانی تجھ پر اور تیرے پیروکار پر تا قیامت لعنت

  13. Khatmay Nobavat( SAW) kisi brelvi mullah ka masla nai ha balkay hr us muslaman ka masla ha jis nay Nabi Pak( SAW) ki nobavat ki gavahi di ha…
    Haq aur beyshak….

  14. Assalamu Alaikum Mohre Nabuwat se tattoo non image banwane Ka jaiz honay ke baraay mein bataiye….but I'm against all kinds of tattoos.kisi ne sawal poocha hay

  15. kia hindu or muslim me farak rakhna chaheye jese khane pene me aek he bartan me khan sakte hen aese maslon p please please zaror masla p video bnae

  16. Me roj tahajjud parhte thi lakin ek hafta se parne ke liye utthte he to bahut dar lagta he.halak hum rat k jikr kar k sote he.Alhambra dullilla.jawab ar dua chahiye.Allah ap ko jannat ata kare.ameen .thanks

Back to top button