Kia Taorat & Injeel perhna HARAM hai ??? Why Joshua accepted ISLAM ??? (Engineer Muhammad Ali Mirza)

Kia Taorat & Injeel perhna HARAM hai ??? Why Joshua accepted ISLAM ??? (Engineer Muhammad Ali Mirza)

Today topic is :Kia Taorat & Injeel perhna HARAM hai ??? Why Joshua accepted ISLAM ??? (Engineer Muhammad Ali Mirza).

Video Information
Title Kia Taorat & Injeel perhna HARAM hai ??? Why Joshua accepted ISLAM ??? (Engineer Muhammad Ali Mirza)
Video Id qCCdGion9Ak
Video Source https://www.youtube.com/watch?v=qCCdGion9Ak
Video Image 1677609602 584 hqdefault
Video Views 190695
Video Published 2019-12-06 09:49:54
Video Rating 5.00
Video Duration 00:15:01
Video Author Engineer Muhammad Ali Mirza – Official Channel
Video Likes 5811
Video Dislikes
Video Tags #Kia #Taorat #Injeel #perhna #HARAM #hai #Joshua #accepted #ISLAM #Engineer #Muhammad #Ali #Mirza
Download Click here

Engineer Muhammad Mirza Ali


Mirza Ali

Muhammad Ali Mirza was born on 4 October 1977 in Jhelum, a city in Punjab, Pakistan. He is a 19th grade mechanical engineer in a government department.

Muhammad Ali Mirza, commonly known as Engineer Muhammad Ali Mirza is a Pakistani Islamic scholar and commentator.

Is engineer Muhammad Ali Mirza Sunni or Shia?

engineer mirza ali

Engineer Muahmmad Ali Mirza is Sunni, Known "Mulim ilmi kitabi".

How do I contact engineer Muhammad Ali?

Engineer Muhammad Ali Mirza

You can call on this phone number, which is "03215900162", and discuss your problem with them.

Who is Mirza Ali of Pakistan?

muhammad mirza ali

Muhammad Ali Mirza, commonly known as Engineer Muhammad Ali Mirza is a Pakistani Islamic scholar and commentator.

What is the age of engineer Muhammad Ali Mirza?

mirza ali

(Engineer Muhammad Ali Mirza) Born: October 4, 1977 (age 46 years) Place: Jhelum Country: Pakistan

What is religion of Engineer Muhammad Ali Mirza?

Engineer Muhammad Ali Mirza is Muslim by religion. He is also known as muslim ilmi kitabi. He says " I,m Muslim Ilmi Kitabi".

What is the Education of Engineer Muhammad Ali Mirza?

He is an engineer by profession. And also a "Pakistani Islamic Scholar". He studied in "University of Engineering and Technology, Taxila".

48 Comments

  1. Ref. No. 1 : How the Bible Led Me to Islam: The Story of a Former Christian Youth Minister – Joshua Evans : https://www.youtube.com/watch?v=IYMKQKSV0bY
    Ref. No. 2 : ATHEIST & Non-MUSLIMS kay GOD & ISLAM peh ETRAZAT kay ILMI JAWABAT (By Engineer Muhammad Ali Mirza) : https://www.youtube.com/watch?v=e23dl53feI4
    Ref. No. 3 : Who Created GOD (ALLAH) ??? ALLAH ko kis nay paida kia ??? Reply to Professor Richard Dawkinz ! ! ! : https://www.youtube.com/watch?v=p00yO357VK0&t=22s
    Ref. No. 4 : QUR'AN Vs Modern SCIENCE ??? Reply to Allegations of Non-Muslims ! ! ! (Engineer Muhammad Ali Mirza) : https://www.youtube.com/watch?v=_gjPvbH1vSA&t=47s
    Ref. No. 5 : Aaj ki INJEEL-e-Muqaddas (BIBLE) ka IHTARAM kerna kewn ZAROORI hai ??? (Engineer Muhammad Ali Mirza) : https://www.youtube.com/watch?v=Rf0bqwNcKEQ

  2. ماشاءاللہ! آپ نے انصاف کی بات کی. الحمد للہ آج تفسیر انجیل جلیل مع متن کے پلے سٹور پر موجود ہے

  3. Sr plz plz plz

    Ap Allah ke khobsorut logo me se hyn

    Ap Pakistan ke logo ko Sood ,Rishwat,Jhoot,be namazi,Sadqa na karna , LGBT
    Jese tamam chizo ke bary me aware kry
    Hmara mulk dobta ja ra hy
    Bewaqoof Logo ko Allah ne ham par Saza ke toor par musalat kar diya hy

    I request you kindly in chizo ko top trend p laye

  4. We are making a room by telling lies Who is God Allah? Allah hands and legs broken. Allah handicapped Allah is a pagan god. Believe in Jesus that he can be saved and redeemed He is the path truth and life. According to his commandments, let us be saved and redeemed.

  5. Ali Mirza yah sari kahaniyan nakar Bible Kisi paster se sikho padhani fir baat kiya karo aapko to Bible ka pata hi nahin hai yah sab kahaniyan tu apne pass se banata hai

  6. Aljeera ki ek report main sirf Muslims ek saal main 13 se 17000 sirf bible read kr k tabdil hote hain. Bible parh k to dekho aap ki ankhen khul jaenge likha hai suchai ko hano gi to suchai azad kre gi. Shetan chah hi nhi k koi bible bi parh le. Aap se ziada sheta janta hai ager koi bible parh le to us ki ankhen khul jaenge

  7. Bible badli nhi pahne wale ko badal deti hai bible muqudas khuda ka zindgi bux kalam hai ab ab aap ko para hona chaye khuda ka zinda Kalam hai kon Jesus Christ hai zinda kalam wo gi hai jo mujsam hua jonah ek ki ek main

  8. کِیُونکہ مَیں تُم سے سَچ کہتا ہُوں کہ جب تک آسمان اور زمِین ٹل نہ جائیں ایک نُقطہ یا ایک شوشہ توریت سے ہرگِز نہ ٹلے گا جب تک سب کُچھ پُورا نہ ہو جائے۔

  9. Aap kahte ho bible tahreer shuda hai hain aap ki akal insani akal hai bible Khuda k ilham se likhi gyai hai khuda k rooh ki tahreek se likhi gyai janab

  10. Engineer sab sab kah skte hain pr jo kuch kisi ne ya jo kiya khuda ne wo bible main likhwaya hai ager tahreef shushda hoti to ye cheese jo nabiyion n galtiyan ki hai nikal ho dete pr ye hi bible. Ki suchai hai ager kisi nabi ne bura kiya ho us ko bi khuda ne baksha nhi us ka anjam bi likha hai gunah k upper parda nhi dalti gunah ki mazduri mout hai gunah ko khuda door se bi dekh nhi skta

  11. امام ابن القیم (۶۹۱ھ-۷۵۱ھ) نے اپنی کتاب ’’إغاثة اللھفان من مصاید الشیطان‘‘ میں تورات کے حوالے سے تین آرا بیان کی ہیں۔ لکھتے ہیں:
    وقد اختلفت أقوال الناس في التوراة التي بأیدیھم: ھل ھي مبدّلة أم التبدیل والتحریف وقع في التأویل دون التنزیل؟ علٰی ثلاثة أقوال طرفین ووسط. فأفرطت طائفة وزعمت أنھا کلھا أو أکثرھا مبدلة مغیّرة لیست التوراة التي أنزلھا اللہ تعالٰی علٰی موسٰی علیه السلام وتعرّض ھٰؤلاء لتناقضھا وتکذیب بعضھا لبعض وغلا بعضھم فجوّز الاستجمار بھا من البول. وقابلھم طائفة أخرٰی من أئمة الحدیث والفقه والکلام، فقالوا: بل التبدیل وقع في التأویل لا في التنزیل وھذا مذھب أبي عبد اللہ محمد بن إسماعیل البخاري. قال في صحیحه: ’’یُحَرِّفُوْنَ: یزیلون. ولیس أحد یزیل لفظ کتاب من کتب اللہ تعالٰی ولکنھم یحرفونه: یتأوّلونه علٰی غیر تأویله.‘‘ وھذا اختیار الرازي في تفسیره. وسمعت شیخنا یقول: وقع النزاع في ھذه المسألة بین بعض الفضلاء فاختار ھذا المذھب ووھن غیره فأنکر علیه فأحضر لھم خمسة عشر نقلًا به ومن حجة ھولاء: أن التوراة قد طبّقت مشارق الأرض ومغاربھا وانتشرت جنوبًا وشمالًا ولا یعلم عدد نسخھا إلا اللہ تعالٰی ومن الممتنع أن یقع التواطؤ علی التبدیل والتغییر في جمیع تلک النسخ بحیث لا یبقٰی في الأرض نسخة إلا مبدلة مغیرة والتغییر علی منھاج واحد وھذا مما یحیله العقل ویشھد ببطلانه. قالوا: وقد قال اللہ تعالٰی لنبیه صلی اللہ علیه وسلم محتجّا علی الیھود بالیھود بھا: (قُلْ فَاْتُوْا بِالتَّوْرٰىةِ فَاتْلُوْهَا٘ اِنْ كُنْتُمْ صٰدِقِيْنَ) (آل عمران ۳: ۹۳)… فھذا بعض ما احتجّت به ھذه الفرقة. وتوسّطت طائفة ثالثة وقالوا: قد زید فیھا وغیّر ألفاظ یسیرة ولکن أکثرھا باقٍ علٰی ما أنزل علیه والتبدیل في یسیر منھا جدًا. (۲/ ۲۸۸ – ۲۹۱)
    ’’یہود کے پاس جو تورات موجود ہے، آیا وہ تبدیل شدہ ہے یا تبدیلی اور تحریف صرف اس کی تعبیر و تشریح میں واقع ہوئی ہے، نہ کہ اس کے الفاظ میں؟ اس بارے میں لوگوں کے ہاں تین اقوال پائے جاتے ہیں۔ دو قول انتہا پسندانہ ہیں اور ایک معتدل: چنانچہ ایک گروہ نے افراط سے کام لیا اور یہ دعویٰ کیا کہ تورات ساری کی ساری یا اس کا بیش تر حصہ تبدیل شدہ ہے اور یہ وہ تورات نہیں ہے جو اللہ تعالیٰ نے موسیٰ علیہ السلام پر نازل کی تھی۔ انھوں نے تورات میں تناقض اور اس کے بیانات کے باہمی تضاد کو نمایاں کیا اور ان میں سے بعض نے تو اس حد تک غلو سے کام لیا کہ اس کے اوراق سے استنجا کرنے کو بھی جائز کہہ دیا۔ اس کے مقابلے میں حدیث اور فقہ اور کلام کے علماء کے ایک گروہ نے یہ موقف اختیار کیا کہ تورات میں تحریف صرف اس کی تعبیر وتشریح میں ہوئی ہے، نہ کہ اس کے الفاظ میں۔ یہ امام بخاری (۱۹۴ھ – ۲۵۶ھ) کا مذہب ہے۔ انھوں نے اپنی ’’صحیح‘‘ (کتاب التوحید، ابتدا باب ۵۵) میں کہا ہے کہ (النساء ۴: ۴۶ اور المائدہ ۵ : ۱۳ میں وارد لفظ) ’يُحَرِّفُوْنَ‘ کے لیے ’یزیلون‘ کی تعبیر اختیار کی گئی ہے، حالاں کہ کوئی شخص اللہ تعالیٰ کی کتابوں میں سے کسی کتاب کے الفاظ مٹا نہیں سکتا، بلکہ وہ بہ ایں معنی اس میں تحریف کرتے ہیں کہ اس کے الفاظ و کلم کے اصل مدعا اور مفہوم سے پھیر دیتے ہیں۔ امام فخرالدین رازی (۵۴۵ھ-۶۰۶ھ) نے بھی اپنی تفسیر (مفاتیح الغیب ۱۰/ ۱۱۷، ۱۱/ ۱۸۷) میں اسی راے کو اختیار کیا ہے۔ میں نے اپنے استاذ امام ابن تیمیہ (۶۶۱ھ – ۷۲۸ھ) کو یہ کہتے سنا کہ بعض فضلا کے مابین اس مسئلے سے متعلق نزاع پیدا ہوئی تو ان میں سے ایک نے مذکورہ راے کو اختیار کیا اور مخالف قول کو کم زور قرار دیا۔ اس پر اعتراض کیا گیا تو اس نے اس کے حق میں پندرہ حوالے پیش کردیے۔ ان اہل علم کی دلیل یہ ہے کہ تورات زمین کے مشرق و مغرب اور شمال و جنوب میں پھیل چکی ہے اور اس کے نسخوں کی صحیح تعداد بھی اللہ تعالیٰ کے سوا کسی کے علم میں نہیں ہے، اور یہ بات محال ہے کہ ان تمام نسخوں میں اس طرح بالاتفاق تبدیلی واقع ہو جائے کہ روے زمین پر محرف نسخے ہی باقی رہ جائیں، اور ان سب نسخوں میں تحریف بھی ایک ہی طریقے پر کر دی جائے۔ یہ بات عقل کے نزدیک محال ہے اور وہ اس کے باطل ہونے کی گواہی دیتی ہے۔ وہ مزید یہ کہتے ہیں کہ اللہ تعالیٰ نے یہود کے خلاف دلیل پیش کرتے ہوئے اپنے پیغمبر کو حکم دیا کہ آپ ان سے کہیں کہ اگر تم سچے ہو تو لاؤ تورات کو اور اس کو پڑھو (آل عمران ۳: ۹۳)۔ … بہرحال یہ وہ بعض دلائل ہیں جو اس راے کے قائلین پیش کرتے ہیں۔ ایک تیسرے گروہ نے متوازن موقف اختیار کیا اور کہا ہے کہ اس میں چند معمولی الفاظ کا اضافہ اور تبدیلی کی گئی ہے، لیکن اس کا بیش تر حصہ اپنی اصل نازل شدہ صورت پر برقرار ہے، جب کہ تبدیلی اس کے بہت معمولی حصے میں ہوئی ہے۔‘‘

  12. اور اگر تم کو اس میں جو ہم نے اپنے بندے پر (کتاب)نازل فرمائی ہے کچھ شک ہو تو اسی طرح کی ایک سورت تم بھی بنا لاو اور اللہ کے سوا جو تمہارے مدد گار ہوں انکو بھی بلا لو اگر تم سچے ہو۔
    البقرہ 23
    لیکن اگر نہ کر سکو اور ہر گز نہیں کر سکو گے تو اس آگ سے ڈرو جس کا ایندھن آدمی اور پتھر ہوں گے جو کافروں کے لیے تیار کی گئی ہے۔
    البقرہ 24
    کیا یہ لوگ کہتے ہیں کہ پیغمبر نے اس کو اپنی طرف سے بنا لیا ہے کہہ دو کہ اگر سچے ہو تو تم بھی اسی طرح کی ایک سورت بنا لاو اور اللہ کے سوا جن کو تم بلا سکو بلا بھی لو۔
    یونس 38
    یہ کیا کہتے ہیں کہ اس نے(قرآن) از خود بنا لیا ہے کہہ دو کہ آگر سچے ہو تو تم بھی ایسی دس (10) سورتیں بنا لاو اور اللہ کے سوا جس جس کو بلا سکتے ہو بلا بھی لو ۔
    ھود 13
    کہہ دو کہ اگر سچے ہو تو تم اللہ کے پاس سے کوئی اور کتاب لے آو جو ان دونوں(کتابوں) سے بڑھ کر ہدایت کرنے والی ہو تاکہ میں بھی اسکی پیروی کروں۔
    القصص49
    کہہ دو کہ اگر انسان اور جن اس بات پر مجتمع ہوں کہ اس قرآن جیسا بنا لایئں تو اس جیسا نہ لا سکیں گے اگرچہ وہ ایک دوسرے کے مددگار ہوں ۔
    بنی اسرائیل 88
    ہمارے ہاں بات بدلہ نہیں کرتی اور ہم بندوں پر ظلم نہیں کیا کرتے ۔
    ق 29
    اور جن لوگوں نے ہماری آیتوں میں ہمیں عاجز کرنے کیلیے سعی کی وہ اہل دوذخ ہیں ۔ الحج51
    اور اگر یہ تمہاری تکزیب کریں تو کہہ دو کہ مجھ کو میرے اعمال (کا بدلہ ملے گا) اور تم کو تمہارے اعمال کا تم میرے عملوں کے جواب دہ نہیں اور میں تمہارے عملوں کا جواب دہ نہیں ہوں۔ یونس 41
    اور جنہوں نے ہماری آیتوں میں کوشش کی کہ ہمیں ہرا دیں ان کے لیے سخت درد دینے والے عذاب کی سزا ہے ۔ سبا 5

Back to top button